Posts Tagged ‘Afghanistan’

Afghan refugees choose to go home as the situation worsens in Pakistan

By Zia Ur Rehman

published in The News



“Pakistan had been a haven for war-affected Afghans for decades, but now Pakistan itself is facing the same problems of terrorism and militancy that Afghanistan has been suffering for the last three decades. We are going back to Afghanistan because Pakistan no longer offers jobs, security and peace of mind,” says Jahan Sher while returning to his home town Mazar-e-Sharif. The economy of Afghanistan has improved during the last four years, he boasts.

UN High Commissioner for Refugees (UNHCR) claims that more Afghan refugees have returned to their homeland from Pakistan this year than in the previous year. Increasing incidents of harassment and arrests by Pakistan’s law enforcement agencies following terrorist activities in the country, poor socio-economic conditions, floods in Khyber-Pakhtunkhwa and increase in forcible deportation are key factors compelling the refugees to go back, refugees’ leaders and rights activists believe.

Pakistan has been host to the world’s largest refugee population. Millions of Afghans fled to Pakistan in the 1980s after the Soviet invasion and during the rule of Taliban in the late 1990s.

Currently there are some 1.6 million registered Afghans in Pakistan, with 45 per cent residing in refugees camps and the rest scattered amongst the host communities. Last year, Pakistan and the UNHCR signed an agreement to extend the stay of Afghan refugees until the end of 2010. About 3.7 million refugees have returned to Afghanistan in the past 9 years, according to UNCHR.

“A total of 1,09,383 Afghans have gone back in March-October through the UNCHR’s return programme, while the number of refugees returning to Afghanistan in 2009 was 51,290,” said Duniya Aslam Khan, UNHCR Pakistan’s Assistant Public Officer. “The number of returnees this year has increased by 51 per cent when compared to the number of people that returned in 2009. Refugees registered in the country are receiving a better assistance, transport and reintegration package, including a grant of $100,” added Khan.

“Most of the returnees cited the difficult situation in Pakistan, worst economic factors and improvement in some provinces of Afghanistan as the important reasons for their decision to return,” said Nader Farhad, a UNHCR spokesperson in Kabul.

“After the continuing terrorist attacks on offices of Pakistan’s security agencies, the crackdown against Afghan refugees, both registered and unregistered, has been accelerated across the country. Thousands of refugees have been arrested and forcibly deported,” said Haji Sohrab, the representative of Afghan refugees appointed by Afghan Consulate in Karachi. “Many Afghan refugees who do not have Proof of Registration (PoR), a document given to these refugees jointly by the government of Pakistan and UNCHR, face strict action by the police,” informed Sohrab.

“Thousands of Afghans, especially students in religious seminaries, daily wage workers and scavengers, have been arrested under the Foreign Registration Act (FRA) during the last two years and deported to their homeland,” said Iqbal Shah Khattak, a law teacher at Urdu University, Karachi.

However, refugees complain that police and law enforcement authorities have time and again raided houses in the refugee camps and other areas and arrested even those community members who had PoR.

“Refugees lived without any legal document for 28 years, till the 2007 registration when they were provided the PoR cards. This gave rise to a lot of legal problems. They could be stopped, searched and arrested under the FRA,” said Khattak, who has worked extensively on refugee rights in Karachi. Afghans in Pakistan have been regularly complaining about harassment and detention at the hands of police, he added.

“The registration process is flawed, leaving many refugees unregistered. Hence, these refugees are vulnerable to harassment and possible deportation,” maintained Sohrab. “The registration process was also marred by problems like lack of guidance, transport, translators and female registration.”

Amid crackdown against illegal Afghan immigrants across the country, industries are now forced by the government not to hire foreign workers without documentary proof, thus adding to the employment problems of refugees.

Denying the reports of arresting refugees with PoR cards, police claim they are arresting only those Afghan immigrants who are living illegally and without documentary proof. “We arrest illegal Afghan immigrants under FRA as well as the refugees involved in crimes,” said police officials, requesting anonymity. Media reports suggest hundreds of Afghan refugees have been detained by police across the country as a pre-emptive security sweep ahead of Muharram.

Majority of refugees are returning to Afghanistan because of worst flooding in Pakistan. Twenty out of 29 refugee camps across the province were swept away by flooding, destroying thousands of homes and leaving about 85,500 refugees homeless. One of the worst hit refugee villages is Azakhel in Nowshera where 23,000 people lost homes.

“Our houses were completely destroyed by the floods and the government is not able to help us,” said Khan Muhammad, an Afghan refugee living in Azakhel camp. “We are planning to go back to Afghanistan where, at least, some of our residential problems would be solved.”

Instead of going back to their villages, most of the returning refugees are settling in cities where they could find jobs easily. “Due to the prevailing insurgency in Pakistan’s tribal areas and Khyber-Pakhtunkhwa, thousands of Pakistani Pashtuns are coming to Afghanistan for jobs,” said Basir Ahmed Hotak, an Afghan journalist.

Majority of refugees hailing from worst-hit provinces of Afghanistan, where security situation is still critical, were reluctant to go back to their homeland. “Majority of those returning belong to northern provinces like Mazar-e-Sharif and Herat where the security situation is better,” informed Arshad Khan, a refugee from Helmand. “How can we return to places like Helmand and Kandahar where security situation is worst?”

UNHCR’s officials and refugee leaders confide to TNS that a large number of repatriated refugees are coming back to Pakistan after taking money from UNHCR. “Going back to Afghanistan was a mistake as the security and economic situation is not good in Afghanistan,” said Hafeez Shah, who recently returned to Karachi from Afghanistan.

Some of the returning refugees complain that there is no shelter, electricity, schools, hospitals and employment opportunities in Afghanistan which compelled them to come back to Pakistan.

Human Rights Commission of Pakistan (HRCP), in its report tilted ‘Afghan Refugees in Pakistan: Push Comes to Shove’ expressed concerns over closure of refugees camps and intimidation of refugees at the hand of police.

But Najamuddin Khan, Federal Minister for SAFRON (Ministry of State and Frontier Region) said their repatriation was completely on voluntary basis and the government wants their respectful return. The ministry had suggested to UNHCR to give $5000 to each Afghan family returning to Afghanistan for shelter and livelihood there.

(The writer is an independent journalist and researcher and works on human rights, conflict and development. Email:




پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ معاہدہ

Posted: August 7, 2010 in Uncategorized
Tags: , ,

پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ معاہدہ

صنعت کاروں، ٹرانسپورٹروں اور حکومت خیبر پختونخوا کے تحفظات


پاکستان اور افغانستان کے مابین حال ہی میں ہونے والے پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ معاہدے پرصنعت کاروں، کاروباری تنظیموں اورگڈز ٹرانسپورٹرزتنظیموں کے ساتھ ساتھ خیبرپختونخوا کی حکومت کی جانب سے شدیدتحفظات دیکھنے میں آئے ہیں۔ ان کاکہنا ہے کہ حکومت نے معاہدے پر دستخط سے قبل نہ ہی ملک کے تجارتی اور کاروباری حلقوں سے مشاورت کی اور نہ ہی سیاسی جماعتوں کو اس حوالے سے اعتماد میں لیا گیا ہے۔

افغانستان کوبندرگاہ کی سہولت دینے کے لیے 1965ء میں پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈکامعاہدہ ہواتھا جس کے تحت افغانستان پاکستانی بندرگاہوں کے ذریعے اپنی اشیائے ضرورت ٹیکسوں، ڈیوٹیوں اور چارجز کی رعایت کے ساتھ درآمدکر رہا تھا۔ تاہم ٹیکسوں میں چھوٹ کی وجہ سے افغان ٹرانزٹ ٹریڈ کے ذریعے افغانستان کے لیے درآمد ہونے والی اشیاء سمگل ہو کر پاکستانی مارکیٹوں میں بڑے پیمانے پر فروخت ہونا شروع ہو گئیں۔ افغانستان میں حالیہ درآمدی سرگرمیوں کا انحصار پاکستان پر ہے اور دونوں ممالک کے مابین تجارت کا توازن پاکستان کے فائدے میں جاتا ہے۔ پشاور یونیورسٹی کے ایریاسٹڈی سینٹر فار افغانستان کی ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان اورافغانستان کے مابین ہونے والی تجارت کا حجم بارہ ارب ڈالرز کے لگ بھگ ہے۔ ستمبر 2001ء کے بعد سے افغانستان میں کھربوں ڈالرز کے تعمیرنو کے منصوبوں پر کام جاری ہے جس کے لیے تعمیرات میں استعمال ہونے والی اشیاء مثلاً سیمنٹ اور الیکٹرک کے سامان کی طلب کا ایک بڑا حصہ پاکستان کی جانب سے پوراکیاجاتاہے۔ اس کے علاوہ پاکستان کی صنعتیں اورکمپنیاں خوراک، ادویات، پیک شدہ دودھ ،پینے کاپانی،گندم ،چاول اور دیگر زرعی اشیا کی طلب بھی پوراکرتی ہیں۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ افغانستان میں موجود اتحادی افواج کے لیے جانے والی سپلائی کا80 فیصد کراچی کی بندرگاہ کے ذریعے افغانستان پہنچایاجاتاہے۔ اسی معاہدے کی وجہ سے پاکستان میں ٹرانسپورٹ کے شعبہ کو فروغ ملا اور پاکستان سے ہزاروں ٹرک اورٹرالرزاس معاہدے کے تحت درآمدی اشیاءافغانستان پہنچارہے ہیں۔

افغان حکومت خطے میں رونما ہونے والی تبدیلوں کے تناظرمیں 46سالہ اس پرانے تجارتی راہداری معاہدے کاازسرنوجائزہ لے کرنئی شرائط کے ساتھ دوبارہ معاہدہ کرنا چاہتی تھی جبکہ اطلاعات کے مطابق اس حوالے سے افغان وزیر تجارت ڈاکٹرانوارالحق احدی کی جانب سے اپنے پاکستانی ہم منصب مخدوم امین فہیم کے ساتھ کیے جانے والے اجلاسوں میں پاکستان بھارت کوراہداری نہ دینے کی وجہ سے معاہدے پردستخط سے انکار کر رہاتھا مگر بعد میں امریکی وزیرخارجہ ہیلری کلنٹن کی پاکستان آمدپران کی موجودگی میں معاہدے پردستخط کیے گئے۔ بعض صحافتی حلقوں کا کہنا ہے کہ ہیلری کلنٹن اپنے دورہ افغانستان سے قبل اس معاہدے پردستخط کرواناچاہتی تھیں۔ نئے معاہدے کے تحت پاکستان نے پہلی بار افغانستان کو اپناتجارتی سامان واہگہ سرحدکے راستےھارت لے جانے کی اجازت دی ہے جبکہ اس کے بدلے میں پاکستان افغان سرزمین کواستعمال کرتے ہوئے وسطی ایشیائی ممالک کواپناسامان برآمدکرے گا۔

ئے معاہدے پرصنعت کاروں، کاروباری تنظیموں، گڈز ٹرانسپورٹرز تنظیموں اور تجارتی امورکے ماہرین کے ساتھ ساتھ خیبر پختونخواکی حکومت کی جانب سے شدید تحفظات کا اظہارکیا گیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق خیبرپختونخوا کی حکومت نے معاہدے میں صوبے کو اعتماد میں نہ لینے کے حوالے سے وفاق سے رابطہ کیاہے اورانہیںاپنے تحفظات سے آگاہ کیاہے۔ حکومت کا یہ مؤقف ہے کہ معاہدے سے خیبرپختونخوا کی معیشت کو کافی نقصان پہنچ سکتاہے اور صوبے کے تاجروں کو اس حوالے سے شدیدمالی مشکلات کاسامنا کرنا پڑے گا لہٰذا وفاقی حکومت افغان راہداری معاہدے کے حوالے سے صوبائی حکومت کو اعتماد میں لے کر معاہدے پر نظرثانی کرے۔ تاجر اور صنعت کار تنظیموں کاشکوہ ہے کہ حکومت نے معاہدے پردستخط سے قبل ملک کے تجارت اور کاروبارسے وابستہ حلقوں سے مشاورت نہیں کی اور نہ ہی سیاسی جماعتوں کو اس حوالے سے اعتماد میں لیا گیا ہے۔

خیبرپختونخوا چیمبرآف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدر ریاض شاہدنے ”ہم شہری“ سے بات چیت کرتے ہوئے اس معاہدے کومسترد کرتے ہوئے کہاکہ یہ پاکستان کی صنعتوں اور کاروبارکے لیے انتہائی نقصان دہ ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اچھاہوتا کہ اس معاہدے پرپارلیمنٹ سے منظوری کے بعد دستخط کیے جاتے۔ ان کا مؤقف ہے کہ راہداری معاہدے کے تحت بھارتی مال سرحدپرمناسب انتظامات نہ ہونے کے سبب بڑی مقدار میں سمگل ہو کر پاکستان کی مارکیٹوں میں پہنچے گا جو نرخوں کے اعتبار سے پاکستانی اشیاء کے مقابلے میں سستا ہو گا جس سے مارکیٹ میں مقابلے کی جو فضاقائم ہو گی، اس کامقابلہ کرنا ملک میں جاری لوڈشیڈنگ، دہشت گردی اور صنعتوں کی بندش کے شکارپاکستانی صنعت کاروں کے لیے انتہائی مشکل ہوگا۔ کراچی چیمبرآف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدرعبدالمجید حاجی محمدنے بھی اس معاہدے پرتنقیدکرتے ہوئے کہاکہ کراچی چیمبرآف کامرس نے اس صورت حال پرمشاورت کا آغاز کیا ہے اوراب ہم حکومت پردباﺅ ڈالیں گے کہ وہ تاجروں کو مشاورت کا حصہ بناتے ہوئے معاہدے میں ضروری ترامیم کریں۔ پشاور کے ممتاز صنعت کار اور پاک افغان تجارتی امور کے ماہر غلام سرور مہمند کاکہناہے کہ ایک جانب اس معاہدے سے پاکستان میں راہداری کے سامان کی سمگلنگ میں اضافہ ہو گاجبکہ دوسری جانب کراچی کی بندرگاہ سے افغانستان کے راستے جانے والاسامان خطرے کی زد میں ہو گا۔ ان کاخیال ہے کہ پاکستان نے بین الاقوامی دباﺅ میں آ کر عجلت میں اس معاہدے پر دستخط کیے ہیں۔ مہمندکامزیدکہناہے کہ معاہدے میں وسطی ایشیاکوبرآمدات سے متعلق حصے پیچیدہ اورمبہم ہیں کیونکہ ان ریاستوں میں پاکستانی برآمدات نہ ہونے کے برابر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دیگرممالک کے برعکس پاکستان کی ان ریاستوںکے ساتھ کوئی مشترکہ سرحد نہیں اور افغان سرزمین کے راستے ان ملکوں کو پاکستانی برآمدات میں اضافہ کرنے کے امکانات معدوم ہیں۔صنعت کارتنظیموں کاکہناہے کہ حکومت کو اگرمعاہدہ کرنا ہی تھاتو اچھا یہ ہوتاکہ وہ معاہدے میں جوابی طورپربھارت سے اسی نوعیت کی متبادل سہولیات کامطالبہ کرتے جس کے تحت پاکستان کوبھارت کے راستے نیپال اورمالدیپ کی راہداری دی جاتی جو وسطی ایشیائی ممالک کے مقابلے میں پاکستانی اشیاء کے لیے اچھی مارکیٹ ہے۔

گڈز ٹرانسپورٹ تنظیموں نے حکومت کی جانب سے حالیہ کیے گئے پاک افغان معاہدے پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ پاکستان ٹرانسپورٹ اونرز ایسوسی ایشن کے صدر اسلم خان نیازی نے ”ہم شہری“ کو بتایا کہ ٹرانسپورٹ کے شعبہ کو داﺅ پر لگا کر حکومت نے امریکا، افغانستان اور بھارت کو خوش کرنے کے لیے معاہدے پردستخط کیے ہیں جبکہ اس معاہدے سے پاکستانی ٹرانسپورٹرز خودکشیوں پر مجبور ہو جائیں گے اور ٹرانسپورٹ سے وابستہ ہزاروں افراد بے روزگار ہو جائیں گے۔ ان کاکہناہے کہ نئے معاہدے کے تحت افغانستان کے ٹرکوں اور کنٹینروں کوپاکستان میںکھلی چھٹی دے کر افغان ٹرانزٹ ٹریڈ سے وابستہ ہزاروں ٹرانسپورٹروں کے کاروبار کو شدید دھچکا لگا ہے۔ آل پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ سپریم کونسل کے چیئرمین چودھری مختار نے ”ہم شہری“کوبتایاکہ پاکستان میں پہلے ہی صنعتیں تباہی کے دہانے پر ہیں جبکہ پاکستانی ٹرانسپورٹروں کاگزاراافغان ٹرانزٹ ٹریڈاوراتحادی افواج کی سپلائی پرہے۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ معاہدے کے تحت یہ بتایاجا رہا ہے کہ افغان ٹرانسپورٹرزپاکستان آئیں گے مگرحقیقت یہ ہے کہ کابل میں تمام ٹرانسپورٹ بھارتی کمپنیوں کی ہے۔ انہوں نے خدشہ کا اظہار کیا ہے کہ حکومت کی جانب سے دستخط کیے گئے اس معاہدے سے پاکستانی ٹرانسپورٹرزکمپنیاں دیوالیہ ہوجائیں گی۔

first published at Weekly HUM SHEHRI Lahore